افسانچے

سیف الرحمن ادیؔب کی سولفظی کہانیاں

افسانہ نگار : سیف الرحمن ادیؔب جلیبی سو لفظی کہانی وہ جلیبی کا ٹکڑا تھا،جو حلوائی کے تھال سے نیچے گر گیا تھا۔گرتے وقت صاف تھا،لیکن چند ہی لمحوں میں دھول ہو گیا،اس پر لگی چکناہٹ مٹی کو اپنے سینے سے لگا...

زنجیر/مختصر افسانہ/short story

زنجیر ۔ سو لفظی کہانی

افسانہ نگار : سیف الرحمن ادیؔب چشمِ نم، تنِ پُر زخم، پارہ پارہ دل اور بہت سارا خون لے کر نکلا۔سنا تھا زنجیریں کھینچنے سے انصاف مل جاتا ہے، اسی لیے ڈھونڈنے لگا تھا۔حاکم کی دہلیز تو بہت دور تھی،منصف کا ...

افسانہ: چھید

افسانہ: چھید

افسانہ نگار : مائرہ انوار راجپوت جتنی سفاک زندگی میرے ساتھ تھی اس سے کہیں زیادہ سفاک اور ظالم میں خود اپنے ساتھ تھی۔۔۔۔ایک ہی تجربہ بار بار ہونے کے باوجود خوش فہمیوں کی اونچی اونچی مگر کمزور بنیاد وال...

افسانہ / تتلیاں آواز دیتی ہیں

تتلیاں آواز دیتی ہیں

افسانہ نگار : نصرت اعوان شام دور کھڑی شرما رہی تھی ۔آسمان سورج کی آخری تمازت سے گلابی ہونے لگا تھا۔۔ پرندوں کے جھنڈ اپنے اپنے ٹھکانوں کی طرف محو پرواز تھے۔۔ہر روز نماز عصر کے بعد یہ منظر چاے کا کپ ہ...

Perwaiz Shaharyar/پرویز شہریار

شجر ممنوعہ کی چاہ میں

افسانہ نگار : پرویز شہریار اُس نے کہا تھا۔’’ازدواج کی ادلابدلی سے فرسودہ رشتے میں نئی بہارآجاتی ہے ،جس سے رشتے کی جڑ مضبوط ہوتی ہے اور محبت کے بوسیدہ شجر میں نئی کونپلیں پھوٹنے لگتی ہیں۔‘‘اُس نے در ا...

Perwaiz Shaharyar/پرویز شہریار

لِواِن ریلیشن سے پرے

افسانہ نگار : ڈاکٹرپرویز شہریار بھوک کی جبلت نے اُن دونوں کوایک کروڑ بیس لاکھ کی گنجان آبادی والے شہر میں ایک چھت کے نیچے ایک ہی کمرے کے اندر بلکہ ایک ہی بستر پر سونے کے لیے مجبور کردیا تھا۔بھوک چاہے...

زین العابدین خان

راکھ میں دبی چنگاری

افسانہ نگار : زین العابدین خاں کُلہاڑی سے کاٹ کے اُس کا سر الگ کیا۔دونوں ٹانگیں الگ کیا اور بہتے ہوئے نہر میں پھینک دیا۔تین حصوں میں لاش بہتی ہوئی آگے چلی گئی ۔رات میں گیدڑوں نے کھایا اور دِن میں کُت...

محمد جاوید انور

محمد جاوید انور کے افسانچے

محمد جاوید انور ایک دوست کا پند نامہ صبح موصول ہوا ،’’قدر کرنا سیکھ لو۔ یہ زندگی آپ کو دوبارہ ملے گی نہ یہ دوست‘‘!میں نے اضافہ کیا،’’چاہئیں آپ کو‘‘ ؟جواب کا منتظر ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ضرورت۔۔۔۔۔۔۔۔اُسے بار...

شمشیر علی شعلہ

انوکھاروپ

افسانچہ افسانہ نگار : شمشیرعلی شعلہ ، کانکی نارہ میری کمپنی کے دفترکےسامنےوالی فٹ پاٹھ پرایک بھکارن چلّا چلّا کر صدالگاتی.“الّلھ کےنام پردےبابا…بھگوان بھلاکرےگا.”مجھ پرنظرپڑتےہی وہ مجھےسلا...

  • 1
  • 2